تاریخ ، جغرافیہ اور رہن سہن

آب و ہوا

ناروے میں چار موسم ہیں۔ بہار، گرما، خزاں اور سرما۔

ملک کے مختلف حصوں میں آب و ہوا مختلف ہے۔ ایک ہی علاقے کےمختلف حصوں کی آب و ہوا میں فرق ہو سکتا ہے اور ہر سال دوسرے سال سے بہت مختلف ہو سکتا ہے۔ ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ ساحلی علاقوں میں سردیاں معتدل اورتھوڑی برف کے ساتھ ہوتی ہیں لیکن اندرونی علاقوں میں سرما میں بہت برفباری اورشدید سردی ہوتی ہے۔ اور اس کے بدلے اندرونی علاقوں میں گرمیوں کے موسم خاصے گرم اور خشک ہوتے ہیں۔ مغربی ناروے میں مشرقی ناروے کی نسبت زیادہ بارش ہوتی ہے۔
ساحلی علاقوں کے ساتھ عموماً خزاں میں بہت آندھی ہوتی ہے۔

شمالی اور جنوبی ناروے میں دن کی روشنی میں بھی بہت فرق ہوتا ہے۔ سردیوں میں آدمی جتنا شمال کی سمت جائے دن اتنے ہی چھوٹے ہوتے جاتے ہیں۔ ہامر فیست جو کہ یورپ کےا نتہائی شمال میں واقع شہر ہے وہاں سردیوں میں تقریباً دو مہینے تاریکی ہی رہتی ہے۔ اس عرصہ میں دن کی روشنی بالکل نہیں ہوتی۔ لیکن گرمیوں میں اس کے بالکل اْلٹ ہوتا ہے۔ تب سْورج آدھی رات کو بھی چمک رہا ہوتا ہے، جسے آدھی رات کا سورج کہا جاتا ہے۔

Midnattssol

جنوبی ناروے میں بھی گرمیوں اور سردیوں میں چھوٹے اور لمبے دنوں کا فرق ہوتا ہے ۔ لیکن جنوب میں نہ تو شمال کی طرح اندھیرا ہوتا ہے اور نہ ہی آدھی رات کا سورج ہوتا ہے۔
پولر سرکل” مو ای رانا “، کے تھوڑا شمال میں ہے جسے آدھی رات کےسورج اور تاریکی والے علاقےکی سرحد مانا جاتا ہے۔

حقائق

درجہ حرارت

گرم ترین درجہ حرارت جو ناروے میں ناپا گیا 35,6 ڈگری سنٹی گریڈ تھا ( 20 جولائی 1970ء کو نیس بئین میں ریکارڈ کیا گیا)۔

سرد تر ین درجہ حرارت جو ناروے میں ماپا گیا 51,4 – ڈگری سنٹی گریڈ تھا (1 جنوری 1886ء کو کاراشوک میں ریکارڈ کیا گیا )۔

معتدل سمندری لہر یں

اگرچہ ناروے انتہائی شمال میں واقع ہے لیکن آب وہوا دنیا کے کئی دوسرے شمالی علاقوں کی نسبت معتدل ہے۔ اس کی وجہ وسطی امریکہ میں میکسیکو گلف سے آنے والی معتدل سمندری لہریں ہیں جو نارو ے کے ساحل تک آ تی ہیں اور گرمی لاتی ہیں۔