تعلیم اورقابلیت

سکول کی ا قد ار کی بنیاد

Aktiv elev

تعلیم و تدریس کے اشتہار سے

( تعلیمی ڈائریکٹور یٹ)

سکول میں تعلیم کے اغراض و مقاصد درجِ ذ یل ہیں:

  • گھر کے تعاون کے ساتھ دنیا اور مستقبل کے لئے دروازے کھولنا اورطلباء کو تاریخی اور ثقافتی بصیرت اورتقویت دینا
  • عیسائیت اورانسانی ورثہ اور رو ا ئیت کی بنیادی اقدار کی تعمیر کی اساس انسانیت اور فطرت کے احترام، رْوحانی آزادی، دوسروں سے شفقت، معافی، برابری اور ہمدردی، مختلف مذاہب اور نظریہ حیات کی اقدار اورانسانی حقوق پر رکھنا
  • قومی ثقافتی ورثہ کے بارے میں آگاہی اور علم کے اضافے میں حصّہ لینا
  • کثیرالثقافتی فہم و فراست اوردوسرے عقیدوں کے لئےاحترام کی سوچ اجاگر کرنا
  • جمہوریت، مساوات اورسائنسی اندازِ فکرکو بڑھانا

تعلیمی تدریسی قانون سے

Ungdomsskoleelever

مساوات و برابری اور فرد کی ذاتی ا نتخاب کی آزادی نارویجن معاشرے کی بنیادی اقدارہیں۔ یہی اقدار سکول میں بھی اہم ہیں۔ سکول کی تعلیم اورسرگرمیاں طلباء کو یہ سکھاتی ہیں کہ تمام انسان ایک جیسی قدر رکھتے ہیں۔طلباء کو سکول میں اپنے روزمرّہ پر اثر ا نداز ہونا چا ہیے اور وہ شروع سے ہی ا پنی تعلیمی ذمّہ داری کو سمجھیں ۔ سکول کی ذمّہ داری ہے کہ تمام طلباء کو اْنکی صحیح سطح کے مطابق موزوں تعلیم دے۔

سکول کا مقصد لوگوں کی خود مختارانہ تعلیم کے ساتھ بہتر سماجی اورپیشہ وارانہ تعلیمی قابلیت دینا ہے۔

ایک جدید جمہوریت میں اس بات کی توقع کی جاتی ہے کہ شہری باعِلم بھی ہوں اور ا پنی ذاتی رائے بھی رکھتے ہوں اور یہ کہ وہ روزگار اور معاشرتی زندگی میں سرگرمی سے حصّہ لیتے ہوں۔ سکول بچوں کو اچھی واقفیتِ عامہ فراہم کرے ۔ اس کا مطلب ہے کہ بچے بہت سے مختلف موضوعات کے بارے میں سیکھیں، وہ زبان، ریاضی، اور اپنے اردگرد کے معاشرے اور فطرت کے بارے میں سیکھیں۔

مفید واقفیتِ عامہ کے علاوہ سکول کی اور بھی کئی ذمّہ داریاں ہیں مثلاً بچے یہ سیکھیں :

  • معلومات تلاش کرنا اور ان معلومات کا تنقیدی جائزہ لینا
  • معلومات اور ا پنی تنقیدی سوچ کی بناء پر ا پنی رائے بنانا
  • اور اپنی رائے کے لئے دلائل دینا

حقائق